علی پر غلو

مکمل کتاب لٹریچر/ کتب ابو شہریار میں ملاحظہ کریں

پیش لفظ 4
علی کعبه اور زحل 6
روح علی کی کعبہ میں آمد 13
علی غیب جانتے ہیں 27
علی ، شہر علم کا دروازہ ہیں 40
علی سب سے پہلے ایمان لائے 43
علی نے سب سے پہلے نماز پڑھی 44
علی ،ذو القرنین ہیں 51
تو ، تو ہی ہے 53
علی اب بادلوں میں ہیں 62
جنگ خیبر کے حوالے سے 77
علی، عیسیٰ کی مانند ہیں 81
علی سے اختلاف کرنا علامت نفاق ہے؟ 87
علی، الیاس کی مانند ہیں 92
علی، ہارون کی مانند ہیں 96
علی ، آصف کی مانند ہیں 98
حدیث منزلتین 108
علی پر دوسرے نکاح کی پابندی 114
من كنت مولاه فعلي مولاه 122
علی قتال کریں گے کی خبر دی گئی تھی 128
علی سید العرب تھے 132
أشهد أن عليا ولي الله 134
علی معراج کا راز تھے 144
علی تمام صحابہ سے افضل ہیں 151
علی بطور قاضی 162
علی کا خفیہ علم 165
علی تاویل قرآن پر جنگ کریں گے ؟ 177
علی ، وصی ہیں 183
علی خوارج کو بد دعائیں دیتے تھے ؟ 184
علی کو اپنی شہادت کی خبر تھی 190
کتاب نہج البلا غہ اہل سنت کی نظر میں 196
فَلْيَشْهَدِ الثقلانِ أني رافضي 200
نسائی اور خصائص علی 207

————————————————————-
بسم اللہ الرحمان الرحیم

علی  رضی اللہ عنہ   ،  صحابی  رسول   ہیں –   رشتہ  میں   علی  ،   رسول اللہ    صلی اللہ علیہ وسلم کے   چچا زاد  بھائی   تھے  اور   ان کے  داماد بھی   تھے –   علی   اس طرح اہل بیت النبی کی ایک نمایاں  شخصیت  تھے  اور   مسلمانوں  کے چوتھے  خلیفہ ہیں –      علی   کے دور   میں البتہ  ان کے   گرد  بہت سے لوگ جمع ہوئے     ان میں سے بعض   ان کو الوہی  صفات  سے متصف  سمجھنے  لگے تھے – بعض   ان کی شہادت  کے انکاری تھے  کہ علی   وفات ہی نہیں پا سکتے بلکہ بادلوں میں بسیرا   کرتے ہیں –  بعض   اس کے قائل    تھے  کہ  علی  کا مرتبہ    انبیاء   جیسا    بلند ہے –  ان میں سے بعض  نظریات ابھی تک    شیعہ و روافض   میں موجود  ہیں –

دور  صحابہ    میں    علی    کے لشکریوں  کو شیعان   علی  کہا  جاتا تھا    جو مختلف الخیال   لوگوں  کا ایک  مجموعہ  تھا –   وقت کے ساتھ لفظ شیعہ   صرف   اہل بیت  کے سیاسی ہمدردوں   کے لئے خاص ہو گیا   – باقی   مسلمانوں نے   اہل سنت   کا لقب پسند کیا –    تاریخ ابن خلدون  کے مطابق    سن  ١٢٨ ھ   سے پہلے  کسی موقعہ  پر   علی  کے  پڑ  پوتے  امام    زید بن علی  بن  حسین بن علی    کا    بعض    شیعوں  (جو امام جعفر کے ساتھ تھے )  سے جھگڑا ہوا  اور انہوں نے پہلی بار ان لوگوں کو   رفضونی   کہہ کر پکارا   یعنی مجھ کو چھوڑنے  والے –   اس طرح شیعوں    کے   لیے  ایک نئی اصطلاح     رافضی  بھی اہل سنت  میں مشہور ہو   گئی  – سن ١٠٠ ہجری  کے آس پاس  محدثین نے  یغلو  فی التشیع    کے الفاظ   جرح  میں استعمال   کرنا شروع کیے   کہ یہ  شخص    تشیع     میں غلو  کرتا ہے – عربی  میں غالی  کا مطلب  شدید عشق ہونا  بھی ہے  اور یہ لفظ   آج بھی  عربی  گانوں میں استعمال ہوتا ہے –   محدثین نے   ان شیعوں  پر    غالی    کا اطلا ق  کیا     جو  علی    کو شیخین   ابو بکر و عمر  سے افضل بنا رہے ہوں –         محدثین  میں  بعض   شیعہ  غالی  بھی   موجود تھے  مثلا      علی  بن جعد ،  عدی بن ثابت  وغیرہ   -یہ   شیعہ    محدثین     اہل سنت  میں بھی مقبول  تھے  یہاں تک کہ  بعض شیعہ مساجد کے ذاکر  تھے  –  اسی طرح بعض  غالی نہیں تھے  لیکن   شیعہ   تھے – ان کی  شیعی  روایات  محدثین  چھان   پھٹک   کر  لیتے تھے مثلا اعمش  وغیرہ – بعض   اختلاط   کا شکار  ہو کر شیعی   روایات بیان کر رہے تھے مثلا امام   عبد الرزاق –      امام   بخاری   و مسلم  نے بھی   ان  لوگوں سے  حدیث روایت کی ہے – روافض  راوی     بہت تھے  اور ان میں وضاع  (حدیث گھڑنے  والے )  بھی  تھے-  اس طرح   علی  کے حوالے سے   شام  و عراق   میں غلو  بہت   بڑھا  ہوا  تھا  –

علی   کو  برا کہنے والے   اہل سنت  کو سن ٢٠٠  ھ   کے آس پاس  ناصبی  کہا  جاتا تھا  –     کچھ  محدثین نصب  کا شکار  تھے  لیکن ان کی خوبی یہ تھی کہ روایات نہیں گھڑتے  تھے –  نصب   ان  راویوں  میں   در  کر آیا   تھا  جن  کے رشتہ دار    جنگ جمل  و صفین   میں قتل ہوئے تھے  لیکن ان   راویوں   کی تعداد    البتہ  آٹے  میں نمک برابر  ہے –     کتب اہل سنت   میں  ایسی کوئی  روایت نہیں  جس    کو نصب  یا تنقیص  علی   پر محمول  کیا جا سکے  البتہ   بعض ایسی ضرور ہیں  جو  علی کے حوالے سے غلو پر منبی ہیں –  اس  سے اندازہ ہوتا ہے  کہ   کس قسم کے راویوں کی تعداد زیادہ تھی –

اس کتاب میں  علی  رضی اللہ عنہ سے متعلق  ان روایات  کا ذکر ہے جو    آجکل      یو ٹیوب پر   اکثر  سننے کو مل رہی ہیں    اور ان  پر   تحقیق  پیش کی گئی ہے-    کتاب پڑھ  کر آپ کو  اندازہ ہو جائے گا کہ   علی   کی شخصیت  پر   اس قدر جھوٹ بولا گیا ہے-

ابو شہریار

٢٠٢٠

Leave a Reply

Your email address will not be published.

6 − five =