حديث ثقلين کا ايک ثقل

سنتی  يا عترتي

نبي صلي اللہ عليہ وسلم کے رشتہ داروں کي امت ميں بہت اہميت ہے – خاص کر امہات المومنين کا درجہ ان ميں سب سے بلند ہے جو تمام مومنوں  کي مائيں ہيں – رشتہ داروں میں  نبي کے مسلمان ہونے والے چچا و کزن وغيرہ ہيں – ان سب کو اہل بيت النبي يا گھر والے کہا جاتا ہے اور ان سب يعني امہات  المومنين ، نبي کے چچا و چچا زاد کزن وغيرہ پر صدقه حرام ہے – يہ اللہ کا مقرر کردہ نظم تھا تاکہ اقرباء پروري کي تہمت سے دين کو بچايا جا سکے اور اب کوئي مشرک يا ملحد يہ نہيں کہہ سکتا کہ نبي نے اپنے رشتہ داروں کو نوازا

مسند احمد کي روايت ہے
حَدَّثَنَا أَسْوَدُ بْنُ عَامِرٍ، أَخْبَرَنَا أَبُو إِسْرَائِيلَ يَعْنِي إِسْمَاعِيلَ بْنَ أَبِي إِسْحَاقَ الْمُلَائِيَّ، عَنْ عَطِيَّةَ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ، قَالَ قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِنِّي تَارِكٌ فِيكُمُ الثَّقَلَيْنِ، أَحَدُهُمَا أَكْبَرُ مِنَ الْآخَرِ كِتَابُ اللهِ حَبْلٌ مَمْدُودٌ مِنَ السَّمَاءِ إِلَى الْأَرْضِ، وَعِتْرَتِي أَهْلُ بَيْتِي، وَإِنَّهُمَا لَنْ يَفْتَرِقَا حَتَّى يَرِدَا عَلَيَّ الْحَوْضَ

رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نے فرمايا ميں دو بوجھ تم پر چھوڑ کر جا رہا ہوں ايک ان ميں دوسرے سے بھاري ہے کتاب اللہ ہے جو رسي ہے آسمان سے زمين تک اور ميرے گھر والوں ميں قريبي رشتہ دار اور يہ دونوں الگ الگ نہيں ہوں گے حتي کہ تم حوض پر مجھ سے ملو گے

اہل سنت کہتے ہيں سند ميں عطية بن سعد العوفي ضعيف ہے کٹر غالي ہے

ابن معين کہتے ہيں أصحابُ الحديث لا يكتبون حديثه محدثين اس کي حديث نہيں لکھتے

امام احمد اس روايت کو مسند ميں لکھا ہے کيونکہ مسند ميں ہر قسم کي موضوع ، منقطع اور ضعيف روايات کو جمع کيا گيا ہے

موضوعات از ابن جوزی میں اس روایت کی ایک سند پر ہے
هَذَا حَدِيثٌ لا يَصِحُّ أَمَّا عَطِيَّةُ فَقَدْ ضَعَّفَهُ أَحْمَدُ وَيَحْيَى وَغَيْرُهُمَا
اس میں عطیہ ہے جس کی امام احمد اور امام یحیی نے تضعیف کی ہے

دوسرا طرق ہے رواه الطبراني في الكبير (2681) و (4971) -من طريق عبد الله بن بكير الغنوي، عن حكيم بن جبير، عن أبي الطفيل، عن زيد بن أرقم مطولاً، وفيه فانظروا كيف تخلفوني في الثقلين فقال رجل وما الثقلان؟ قال رسول الله صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كتاب الله طرفٌ بيد الله، وطرفٌ بأيديكم، فاستمسكوا به لا تضلوا، والآخر عترتي، وإنهما لن يفترقا حتى يردا علي الحوض

طبراني ميں بھي ہے يہاں حکيم بن جبير متروک ہے ، عبد الله بن بكير الغنوي سخت مجروح ہے

مستدرک حاکم ميں ہے

ورواه الحاكم 3/109 من طريق حسان بن إبراهيم الكرماني، عن محمد بن سلمة بن كهيل، عن أبيه، عن أبي الطفيل، عن زيد بن أرقم، بلفظ إني تارك فيكم أمرين لن تضلوا إن اتبعتموهما، وهما كتاب الله، وأهل بيتي عترتي

اس سند ميں محمد بن سلمة بن كهيل ضعيف ہے

النسائي (8148) و (8464) ،الطحاوي في شرح مشكل الآثار (1765) ، ابن أبي عاصم في السنة (1555) ، الطبراني الكبير (4969) ، مستدرک الحاكم 3/109 من اس طرق سے ہے

أبي عوانة، عن الأعمش، عن حبيب بن أبي ثابت، عن أبي الطفيل، عن زيد بن أرقم، بلفظ حديث أبي سعيد
يہ سند منقطع ہے کيونکہ حبيب بن أبي ثابت کا سماع کسي صحابي سے نہيں
قال ابن المديني لقي ابن عباس وسمع من عائشة، ولم يسمع من غيرهما من الصحابة
اعمش مدلس کا عنعنہ بھي ہے اور ابو طفيل کي ملاقات زيد بن ارقم سے ثابت نہيں
دوم ابو طفيل آخري عمر ميں مختار ثقفي کے ساتھ تھے اور بعض محدثين نے اس کي صحابيت کو رد کيا ہے
راقم ابو طفيل کو صحابي نہيں سمجھتا
ابو طفيل عامر بن واثلة کے نزديک عترت رسول سے مراد امام باقر يا زين العابدين نہيں بلکہ امام محمد بن حنفيہ تھے اور يہ خود کيسانيہ فرقے سے تعلق رکھتے تھے جن کے نزديک اصل امام ابن حنفيہ تھے – ابن حنفيہ خود ان سب شيعوں سے بيزار تھے اور ابن زبير کے قتل کے بعد فورا عبد الملک بن مروان کو خليفہ تسليم کيا

شيعہ عالم السيد علي البروجردي طرائف المقال ميں کہتے ہيں

عامر بن واثلة بالثاء المنقطة فوقها ثلاث نقطة كيساني صه وفي ق معدود من خواصه، وفي كش كان ممن يقول بحياة محمد وله في ذلك شعر، وخرج تحت راية المختار
عامر بن واثلة يہ کيساني تھا يہ ان ميں تھا جو محمد بن حنفيہ کے زندہ رہنے کے قائل ہيں اور اس نے اس پر شعر کہے اور يہ مختار ثقفي کے جھنڈے تلے نکلا

شيعہ کتاب اختيار معرفة الرجال از ابي جعفر الطوسي ميں ہے
وأما عامر بن واثلة فكانت له يد عند عبدالملك بن مروان فلهى عنه
عامر نے عبد الملک کو اپنا ہاتھ ديا اور پھر بيعت سے نکل گيا

يعني شيعہ علماء کے مطابق يہ بيعت توڑ کر کيساني بن گيا تھا

راقم کہتا ہے امام بخاري نے غلطي کي ہے اور اس کو صحابي سمجھا ہے

امام بخاری کے استاد امام علی المدینی کا قول تھا کہ محدثین نے کہا تھا اس کی روایت مت لو

الکامل از ابن عدی میں ہےحَدَّثَنَا ابْنُ حَمَّادٍ، حَدَّثني صَالِحُ بْنُ أَحْمَد بْن حنبل، قَال: حَدَّثَنا علي، قَالَ: سَمِعْتُ جرير بْن عَبد الحميد، وقِيلَ لَهُ: كَانَ مغيرة ينكر الرواية، عَن أبي الطفيل؟ قَال: نَعم.

امام علی نے کہا میں نے جریر کو کہتے سنا کہ ان سے پوچھا گیا کہ کیا مغیرہ ابو طفیل کی روایت کا انکار کرتے تھے ؟ جریر نے کہا ہاں
ابو طفیل آخری عمر میں المختار الثقفي کذاب کے ساتھ تھے جس کا قتل ابن زبیر رضی الله عنہ نے کرایا

الترمذي (3788) من اسي طريق يعني حبيب بن أبي ثابت، عن زيد بن أرقم سے يہ روايت ہے لہذا يہ بھي منقطع ہے کيونکہ اصل ميں روايت کے بيچ ميں ابو طفيل غائب ہے

اس کا ايک دوسرا طرق الترمذي (3786) ، الطبراني في الكبير (2680) ميں ہے

نصر بن عبد الرحمن الكوفي، عن زيد بن الحسن الأنماطي، عن جعفر بن محمد، عن أبيه، عنه، مرفوعاً في خطبته صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ في حجة الوداع بلفظ يا أيها الناس إني قد تركت فيكم ما إن أخذتم به لن تضلوا كتاب الله، وعترتي أهل بيتي

اس کي سند بھي ضعيف ہے – سند ميں زيد بن الحسن الأنماطي مجروح ہے – شيعہ کہتے ہيں يہ أصحاب الصادق عليه السلام ميں سے تھے

صحيح مسلم ميں دوسري طرف جابر کي سند سے حديث ہے جس کے الفاظ ہيں
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ، وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، جَمِيعًا عَنْ حَاتِمٍ، قَالَ أَبُو بَكْرٍ: حَدَّثَنَا حَاتِمُ بْنُ إِسْمَاعِيلَ الْمَدَنِيُّ، عَنْ جَعْفَرِ بْنِ مُحَمَّدٍ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ …. وقد تركت فيكم ما لن تضلوا بعده إن اعتصمتم به، كتاب الله
اس ميں رشتہ داروں کا ذکر نہيں ہے

زيد بن الحسن الأنماطي نے يہ روايت ابو طفيل کيساني سے بھي منسوب کي ہے

الطبراني الكبير (2683) اور (3052) من اس کا ايک طرق ہے

زيد بن الحسن الأنماطي، عن معروف بن خربوذ، عن أبي الطفيل، عنه، مرفوعاً، وفيه وإني سائلكم حين تردون علي عن الثقلين، فانظروا كيف تخلفوني فيهما، الثقل الأكبر، كتاب الله عز وجل، سببٌ طرفهُ بيد الله، وطرفُه بأيديكم، فاستمسكوا به لا تضلوا ولا تبدلوا، وعترتيأهل بيتي، فانه قد نبأني اللطيف الخبير، أنهما لن ينقضيا حتى يردا علي الحوض،

يہ سند ضعيف ہے – سند ميں وہی زيد بن الحسن الأنماطي ضعیف ہے – امام أبو حاتم اس کو منكر الحديث قرار ديتے ہيں
اس کے علاوہ معروف بن خربوذ بھي سخت مجروح ہے

ابن أبي عاصم في السنة (1558) ، والطحاوي في شرح مشكل الآثار (1760) من دو طرق ہيں
عن أبي عامر العقدي، عن كثير بن زيد، عن محمد بن عمر بن علي، عن أبيه، عنه الفاظ ہيں

إني قد تركت فيكم ما إن أخذتم به لن تضلوا كتاب الله، سببه بيد الله، وسببه بأيديكم، وأهل بيتي

طحاوي کا قول ہے
وَكَثِيرُ بْنُ زَيْدٍ مَدِينِيٌّ مَوْلًى لِأَسْلَمَ , قَدْ حَدَّثَ عَنْهُ حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ , وَوَكِيعٌ , وَأَبُو أَحْمَدَ الزُّبَيْرِيُّ
کثير بن زيد مديني ہے – لہذا يہ سند بھي ضعيف ہے کيونکہ كثير بن زيد الأسلمي المدني ضعيف ہے
قال النسائي (الضعفاء والمتروكون) ضعيف
قال ابن المديني صالح، وليس بقوي
معلمي کہتے ہيں ضعيف ہے
الأنوار الكاشفة (ص 41) غير قوي، وص (145) ضعيف

مسند البزار ميں ہے
عن الحسين بن علي بن جعفر، عن علي بن ثابت (وهو الدهان العطار الكوفي) ، عن سعاد بن سليمان، عن أبي إسحاق (وهو السبيعي) ، عن الحارث، عنعلي، مرفوعاً، بلفظ إني مقبوض، وإني قد تركت فيكم الثقلين -يعني كتاب الله، وأهل بيتي
اس سند ميں الحسين بن علي بن جعفر مجہول ہے قال أبو حاتم لا أعرفه ميں اس کو نہيں جانتا
سعاد بن سليمان کو بھي أبو حاتم نے ضعيف قرار ديا ہے
لَيْسَ بِقَوِيٍّ فِي الْحَدِيثِ

شيعہ کتاب أصحاب الامام الصادق (ع) – عبد الحسين الشبستري ميں ہے کہ سعاد ان ميں ہے جو صدوقا يخطئ صدوق ہو کر غلطياں کرتے ہيں

مسند عبد بن حميد (240) ، وابن أبي عاصم (754) ، والطبراني في الكبير (4921) و (4922) و (4923) ان سب ميں اس کا ايک اور طرق ہے – سند ہے
شريك، عن الركين بن الربيع، عن القاسم بن حسان، عنه، مرفوعاً، بلفظ إني تارك فيكم ما إن تمسكتم به لن تضل كتاب الله، وعترتي أهل بيتي، فإنهما لن يفترقا حتى يردا عليَّ الحوض،

راقم کہتا ہے سند میں شَريك بن عبد الله النخعي ہے جس کو سيئ الحفظ خراب حافظہ والا بتایا گیا ہے اور امام مسلم نے اس کی حدیث نہیں لی الذهبي الميزان ميں کہتے ہيں اس کي حديث منکر ہے
الکامل از ابن عدی میں ہے

أخبرنا الساجي، حَدَّثَنا الحسن بن أحمد، حَدَّثَنا مُحَمد بن أبي عُمَر الضرير، عن أبيه، قالَ: سَألتُ ابن المُبَارك عن شَرِيك قال ليس حديثه بشَيْءٍ.
سمعتُ ابن حماد يقول: قال السعدي شَرِيك بن عَبد الله سيء الحفظ مضطرب الحديث مائل.
ابن مبارک کہتے ہیں اس کی حدیث کوئی چیز نہیں
جوزجانی کہتےہیں مضطرب الحدیث ہے

مشکل الاثار از امام طحاوی میں ہے

حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ شُعَيْبٍ قَالَ: أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى قَالَ: حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ حَمَّادٍ قَالَ: حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ , عَنْ سُلَيْمَانَ يَعَنْي الْأَعْمَشَ قَالَ حَدَّثَنَا حَبِيبُ بْنُ أَبِي ثَابِتٍ , عَنْ أَبِي الطُّفَيْلِ , عَنْ زَيْدِ بْنِ أَرْقَمَ قَالَ: لَمَّا رَجَعَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , عَنْ حَجَّةِ الْوَدَاعِ وَنَزَلَ بِغَدِيرِ خُمٍّ أَمَرَ بِدَوْحَاتٍ فَقُمِّمْنَ , ثُمَّ قَالَ: ” كَأَنِّي دُعِيتُ فَأَجَبْتُ , إِنِّي قَدْ تَرَكْتُ فِيكُمُ الثَّقَلَيْنِ , أَحَدُهُمَا أَكْبَرُ مِنَ الْآخَرِ: كِتَابَ اللهِ عَزَّ وَجَلَّ وَعِتْرَتِي أَهْلَ بَيْتِي , فَانْظُرُوا كَيْفَ تَخْلُفُونِي فِيهِمَا , فَإِنَّهُمَا لَنْ يَتَفَرَّقَا حَتَّى يَرِدَا عَلَيَّ الْحَوْضَ ” ثُمَّ قَالَ: ” إِنَّ اللهَ عَزَّ وَجَلَّ مَوْلَايَ , وَأَنَا وَلِيُّ كُلِّ مُؤْمِنٍ ” ثُمَّ أَخَذَ بِيَدِ عَلِيٍّ رَضِيَ اللهُ عَنْهُ فَقَالَ: ” مَنْ كُنْتُ وَلِيَّهُ فَهَذَا وَلِيُّهُ , اللهُمَّ وَالِ مَنْ وَالِاهُ ,
وَعَادِ مَنْ عَادَاهُ ” فَقُلْتُ لِزَيْدٍ سَمِعْتَهُ مِنْ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ؟ فَقَالَ: مَا كَانَ فِي الدَّوْحَاتِ أَحَدٌ إِلَّا رَآهُ بِعَيْنَيْهِ , وَسَمِعَهُ بِأُذُنَيْهِ , [ص:19] قَالَ أَبُو جَعْفَرٍ: فَهَذَا الْحَدِيثُ صَحِيحُ الْإِسْنَادِ , لَا طَعْنَ لِأَحَدٍ فِي أَحَدٍ مِنْ رُوَاتِهِ

الطحاوي: هذا الحديث صحيح الإسناد، لا طعن لأحد في أحد من رواته
طحاوی کہتے ہیں اس کی سند صحیح ہے راوی پر کوئی طعن نہیں ہے

راقم کہتا ہے اس کی سند میں حبیب مدلس کا عنعنہ ہے اور ابو طفیل پر کثیر کلام اوپر گذر چکا ہے کہ یہ اہل تشیع و اہل سنت میں بھی بعض کے نزدیک مشکوک شخص ہے جو صحیح عقیدے پر نہیں تھا

البدایہ و النہایہ از ابن کثیر میں ہے
وَقَدْ رَوَى النَّسَائِيُّ فِي سُنَنِهِ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ الْمُثَنَّى عَنْ يَحْيَى بْنِ حَمَّادٍ عَنْ أَبِي معاوية عَنِ الْأَعْمَشِ عَنْ حَبِيبِ بْنِ أَبِي ثَابِتٍ عَنْ أَبِي الطُّفَيْلِ عَنْ زَيْدِ بْنِ أَرْقَمَ. قال: لما رجع رسول الله مِنْ حَجَّةِ الْوَدَاعِ وَنَزَلَ غَدِيرَ خُمٍّ أَمَرَ بِدَوْحَاتٍ فَقُمِمْنَ [2] ثُمَّ قَالَ: «كَأَنِّي قَدْ دُعِيتُ فأجبت، انى قد تركت فيكم الثقلين كِتَابُ اللَّهِ وَعِتْرَتِي أَهْلَ بَيْتِي، فَانْظُرُوا كَيْفَ تَخْلُفُونِي فِيهِمَا، فَإِنَّهُمَا لَنْ يَفْتَرِقَا حَتَّى يَرِدَا عَلَيَّ الْحَوْضَ، ثُمَّ قَالَ اللَّهُ مَوْلَايَ وَأَنَا وَلِيُّ كُلِّ مُؤْمِنٍ، ثُمَّ أَخَذَ بِيَدِ عَلِيٍّ فَقَالَ: مَنْ كُنْتُ مَوْلَاهُ
فَهَذَا وَلِيُّهُ، اللَّهمّ وَالِ مَنْ وَالَاهُ وَعَادِ مَنْ عَادَاهُ» فَقُلْتُ لِزَيْدٍ سَمِعْتُهُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ مَا كَانَ فِي الدَّوْحَاتِ أَحَدٌ إِلَّا رَآهُ بِعَيْنَيْهِ وَسَمِعَهُ بِأُذُنَيْهِ تَفَرَّدَ بِهِ النَّسَائِيُّ مِنْ هَذَا الْوَجْهِ. قَالَ شَيْخُنَا أَبُو عَبْدِ اللَّهِ الذَّهَبِيُّ وَهَذَا حَدِيثٌ صَحِيحٌ.

اس سند پر ابن کثیر نے لکھا ہے کہ امام الذھبی کہتے تھے کہ اس کی سند صحیح ہے

راقم کہتا ہے امام علی المدینی کا قول ہے کہ حبیب کا سماع کسی صحابی سے نہیں
وقال سفيان الثوري وأحمد بن حنبل ويحيى بن معين والبخاري وغيرهم لم يسمع حبيب بن أبي ثابت من عروة بن الزبير شيئا
اور احمد ، سفیان ثوری ، ابن معین ، بخاری کے نزدیک اس کا سماع عروہ بن زبیر المتوفی ٩٣ ھ سے بھی نہیں

دوسری طرف اہل تشیع نے حبیب بن ابی ثابت سے کوئی روایت نہ تفسیروں میں لکھی ہے نہ اپنی حدیث کی کتب میں
نہ ان کے ہزار سال میں علماء رجال میں سے کسی نے اس کا ترجمہ قائم کیا ہے یہاں تک کہ امام الخوئی کا جنم ہوا

مسند یعقوب بن سفیان میں ہے
جرير بن عبد الحميد الرازي عن الحسن بن عبيد الله النخعي عن أبي الضحى مسلم بن صُبيح عن زيد بن أرقم مرفوعاً: “إني تارك فيكم ما إن تمسكتم به لن تضلوا: كتاب الله عز وجل وعترتي أهل بيتي، وإنهما لن يتفرقا حتى يردا عليَّ الحوض
اس سند میں الحسن بن عبيد الله النخعي ضعیف ہے

قال الدَّارَقُطْنِيّ: ليس بالقوي
النکت میں معلمی کا قول ہے
عامّة حديثه مضطرب
اس کی بیشتر احادیث میں اضطراب ہے

ايک روايت ميں ميرا نسب بھي بيان ہوا ہے مسند البزار (2617) زوائد، والحاكم 1/93 ميں ہے
عن داود بن عمرو الضبي، عن صالح بن موسى الطلحي، عن عبد العزيز بن رفيع، عن أبي صالحٍ، عن أبي هريرة، مرفوعاً، بلفظ إني خلفت فيكم اثنين لن تضلوا بعدهما أبدا، كتاب الله، ونسبي لفظ البزار

اس کي سند صالح بن موسى الطلحي کي وجہ سے ضعيف ہے
اہل تشيع کہتے ہيں صالح بن موسى الطلحي الكوفي ، أصحاب الصادق عليه السلام ميں سے ہے ليکن اس کي توثيق پر کوئي کلمہ ان کی کتب میں نہيں ملا

مسند یعقوب بن سفیان میں ہے
حدثنا عبيد الله بن موسى، قال: أخبرنا إسرائيل، عن عثمان بن المغيرة، عن علي بن ربيعة، قال: لقيت زيد بن أرقم وهو يريد الدخول على المختار، فقلت له بلغني عنك حديث. قال: ما هو؟ قلت: أسمعت النبي صلى الله عليه وعلى آله وسلم يقول: «إني تارك فيكم الثقلين: كتاب الله عز وجل، وعترتي»؟ قال: نعم.
علی بن ربيعة نے کہا میں زید سے ملا وہ مختار کے پاس جا رہے تھے میں نے ان سے کہا مجھ کو آپ کی ایک حدیث پہنچی ہے – زید بولے کون سی ؟ میں نے کہا کیا آپ نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا تھا کہ انہوں نے فرمایا کہ میں دو بوجھ چھوڑ رہا ہوں ؟ زید نے کہا ہاں

سند میں عثمان بن المغيرة أبو المغيرة الثقفي مولاهم الكوفي پر دارقطني کہتے ہیں : ليس بالقوي قوی نہیں ہے

مصادر اہل تشیع

نبي صلي اللہ عليہ وسلم کي وفات کے بعد ان کے رشتہ داروں نے بھي دين ميں اسي چيز پر عمل کيا ہے جو سنت سے معلوم ہے يا دين کا فہم ہے لہذا روايات ميں عترتي کے الفاظ کس مقصد کے لئے تھے ؟ اہل تشيع کہتے ہيں عترت يعني اخص اقربائي ہے يعني خاص رشتہ دار يا قريبي رشتہ دار يا خون کے رشتہ سے رشتہ دار مراد ہيں – سسرالي رشتہ دار يا بيوياں مراد نہيں ہيں – اس طرح وہ اہل بيت ، عترت سے الگ ہو جاتے ہيں – اور نيچے روايات آ رہي ہيں جن ميں راويوں کا مدعا ہے کہ ابو بکر اور عمر اور ان کي بيٹيياں رضي اللہ عنہما تمام عترت سے خارج ہيں

اب مصادر اہل تشيع کي طرف توجہ کريں جس ميں نبي صلي اللہ عليہ وسلم کے تمام خون کے رشتہ داروں کو عترت سے نکال ديا گيا ہے سوائے علي رضي اللہ عنہ کے – کليني روايت لائے ہيں کہ عترت ميں نہ عباس ہيں نہ ان کي اولاد ، نہ عقيل ہيں نہ ان کي اولاد بلکہ عترت ميں مراد صرف علي ہيں

الکافي از کليني کي روايت ہے
أحمد بن محمد ومحمد بن يحيى، عن محمد بن الحسين، عن محمد بن عبدالحميد عن منصور بن يونس، عن سعد بن طريف، عن أبي جعفر عليه السلام قال قال رسول الله صلى الله عليه وآله من أحب أن يحيى حياة تشبه حياة الانبياء، ويموت ميتة تشبه ميتة الشهداء ويسكن الجنان التي غرسها الرحمن(2) فليتول عليا وليوال وليه وليقتد بالائمة من بعده، فإنهم عترتي خلقوا من طينتى، اللهم ارزقهم فهمي وعلمي، وويل للمخالفين لهم من امتي، اللهم لا تنلهم شفاعتي

رسول اللہ نے فرمايا علي سے دوستي کرو يہ ميري عترت ميں سے ہے ميري مٹي سے ہي اس کي تخليق ہوئي ہے

سند سعد بن طريف کي وجہ سے ضعيف ہے – شيعہ عالم ابن داوود الحلي کتاب رجال ابن داود ميں کہتے ہيں
سعد بن طريف، بالطاء المهملة، الحنظلي وقيل الدئلي وهو الاسكاف، ويقال الخفاف ين، قر، ق (كش) قال حمدويه كان ناووسيا وقف على أبي عبدالله عليه
السلام حديثه يعرف وينكر (غض) في حديثه نظر وهو يروي عن الاصبغ بن نباتة
سعد بن طريف ناوسي تھا يعني امامت امام جعفر پر توقف کيا ہوا تھا اس کي حديث پر نظر ہے

نجاشي کہتے ہيں يہ بنو اميہ کا قاضي تھا
سعد بن طريف الحنظلي مولاهم، الإسكاف، كوفي، يعرف وينكر روى عن الأصبغ بن نباتة، وروى عن أبي جعفر وأبي عبد الله عليهما السلام ، وكان قاضيا

الکافي از کليني ميں ہے

عدة من أصحابنا، عن أحمد بن محمد بن عيسى، عن الحسين بن سعيد، عن فضالة بن أيوب عن أبي المغرا، عن محمد بن سالم، عن أبان بن تغلب قال سمعت أبا عبدالله عليه السلام يقول قال رسول الله صلى الله عليه وآله من أراد أن يحيى حياتي، ويموت ميتتي ويدخل جنة عدن التي غرسها الله ربي بيده، فليتول علي بن أبي طالب وليتول وليه، وليعاد عدوه، وليسلم للاوصياء من بعده، فإنهم عترتي من لحمي ودمي، أعطاهم الله فهمي وعلمي، إلى الله أشكو [أمر] امتي، المنكرين لفضلهم، القاطعين فيهم صلتي، وأيم الله ليقتلن ابني(1) لا أنالهم الله شفاعتي

رسول اللہ نے فرمايا علي سے دوستي کرو وہ ميري عترت و خون و گوشت ہے
سند ميں ابان بن تغلب سخت مجروح ہے
سمعتُ ابن حماد يقول قَالَ السعدي أَبَان بْن تغلب زائغ مذموم المذهب مجاهر
حد سے بڑھا ہوا مذھب ميں مذموم ہے

اس سے روايت کرنے والا محمد بن سالم مجہول الحال ہے

أبي المغرا کا ذکر شيعہ کتب رجال ميں مفقود ہے

قال ابن الأثير : وعترته -صلى الله عليه وسلم- بنو عبد المطلب
ابن اثیر کہتے ہیں عترت یہ بنو عبد المطلب ہیں
یعنی علی اور ان کی اولاد ہی نہیں بہت سے ہیں

اب تک معلوم ہوا کہ عترت ميں سے نبي صلي اللہ عليہ السلام کے خون کے رشتہ داروں ميں سے بنو عباس و بنو عقيل کو اہل تشيع نے نکال ديا اور اس طرح اس قول نبوي سے پہلے سنت کو خارج کيا گيا پھر اہل بيت النبي کو محدود کيا پھر بنو عباس و بنو عقيل کو بھي نکال ديا اہل سنت اس چھانٹي کو راويوں کي سياست قرار ديتے ہيں اور اہل سنت ميں مقبول فرقوں پر کتب (الملل و النحل ، الفرق بين الفرق وغيرہم ) ميں اسي وجہ سے شيعہ کو ايک سياسي فرقہ قرار ديا گيا ہے

کیا ازواج النبی اہل بیت بھی نہیں ؟

بعض غالي راوي يہ بھي بيان کر رہے تھے کہ ازواج النبي بھي اہل بيت ميں سے نہيں ہيں

سنن الدارمي ميں ہے

حَدَّثَنَا جَعْفَرُ بْنُ عَوْنٍ، حَدَّثَنَا أَبُو حَيَّانَ، عَنْ يَزِيدَ بْنِ حَيَّانَ، عَنْ زَيْدِ بْنِ أَرْقَمَ، قَالَ قَامَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَوْمًا خَطِيبًا فَحَمِدَ اللَّهَ وَأَثْنَى عَلَيْهِ، ثُمَّ قَالَ يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِنَّمَا أَنَا بَشَرٌ يُوشِكُ أَنْ يَأْتِيَنِي رَسُولُ رَبِّي فَأُجِيبَهُ، وَإِنِّي تَارِكٌ فِيكُمُ الثَّقَلَيْنِ أَوَّلُهُمَا كِتَابُ اللَّهِ فِيهِ الْهُدَى وَالنُّورُ، [ص2091] فَتَمَسَّكُوا بِكِتَابِ اللَّهِ، وَخُذُوا بِهِ ، فَحَثَّ عَلَيْهِ وَرَغَّبَ فِيهِ، ثُمَّ قَالَ «وَأَهْلَ بَيْتِي أُذَكِّرُكُمُ اللَّهَ فِي أَهْلِ بَيْتِي ثَلَاثَ مَرَّاتٍ
رسول اللہ صلي اللہ عليہ وسلم نے فرمايا ايک دن خطبہ ميں پہلے اللہ تعالي کي تعريف کي حمد کي پھر فرمايا اے لوگوں ميں ايک بشر ہوں ہو سکتا ہے اللہ کا فرشتہ آئے اور ميں اپنے رب کو جواب دوں ميں تم ميں دو بوجھ چھوڑ رہا ہوں پہلا بوجھ اللہ کي کتاب ہے جس ميں ہدايت ہے نور ہے اس کو کتاب سے پکڑو اور تھام لو اس کي طرف رغبت کرو پھر فرمايا دوسرا بوجھ ميرے اہل بيت ہيں تين بار فرمايا

اس کی سند مسلم کی شرط پر ہے اور اہل بیت کو خمس دینے کا حکم قرآن میں ہے اور قرابت داری کو قائم رکھنا بھی دین کا حکم ہے

صحیح مسلم میں ہے

حَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ، وَشُجَاعُ بْنُ مَخْلَدٍ، جَمِيعًا عَنِ ابْنِ عُلَيَّةَ، قَالَ زُهَيْرٌ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، حَدَّثَنِي أَبُو حَيَّانَ، حَدَّثَنِي يَزِيدُ بْنُ حَيَّانَ، قَالَ انْطَلَقْتُ أَنَا وَحُصَيْنُ بْنُ سَبْرَةَ، وَعُمَرُ بْنُ مُسْلِمٍ، إِلَى زَيْدِ بْنِ أَرْقَمَ، فَلَمَّا جَلَسْنَا إِلَيْهِ قَالَ لَهُ حُصَيْنٌ لَقَدْ لَقِيتَ يَا زَيْدُ خَيْرًا كَثِيرًا، رَأَيْتَ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، وَسَمِعْتَ حَدِيثَهُ، وَغَزَوْتَ مَعَهُ، وَصَلَّيْتَ خَلْفَهُ لَقَدْ لَقِيتَ، يَا زَيْدُ خَيْرًا كَثِيرًا، حَدِّثْنَا يَا زَيْدُ مَا سَمِعْتَ مِنْ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، قَالَ يَا ابْنَ أَخِي وَاللهِ لَقَدْ كَبِرَتْ سِنِّي، وَقَدُمَ عَهْدِي، وَنَسِيتُ بَعْضَ الَّذِي كُنْتُ أَعِي مِنْ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، فَمَا حَدَّثْتُكُمْ فَاقْبَلُوا، وَمَا لَا، فَلَا تُكَلِّفُونِيهِ، ثُمَّ قَالَ قَامَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَوْمًا فِينَا خَطِيبًا، بِمَاءٍ يُدْعَى خُمًّا بَيْنَ مَكَّةَ وَالْمَدِينَةِ فَحَمِدَ اللهَ وَأَثْنَى عَلَيْهِ، وَوَعَظَ وَذَكَّرَ، ثُمَّ قَالَ أَمَّا بَعْدُ، أَلَا أَيُّهَا النَّاسُ فَإِنَّمَا أَنَا بَشَرٌ يُوشِكُ
أَنْ يَأْتِيَ رَسُولُ رَبِّي فَأُجِيبَ، وَأَنَا تَارِكٌ فِيكُمْ ثَقَلَيْنِ أَوَّلُهُمَا كِتَابُ اللهِ فِيهِ الْهُدَى وَالنُّورُ فَخُذُوا بِكِتَابِ اللهِ، وَاسْتَمْسِكُوا بِهِ فَحَثَّ عَلَى كِتَابِ اللهِ وَرَغَّبَ فِيهِ، ثُمَّ قَالَ «وَأَهْلُ بَيْتِي أُذَكِّرُكُمُ اللهَ فِي أَهْلِ بَيْتِي، أُذَكِّرُكُمُ اللهَ فِي أَهْلِ بَيْتِي، أُذَكِّرُكُمُ اللهَ فِي أَهْلِ بَيْتِي» فَقَالَ لَهُ حُصَيْنٌ وَمَنْ أَهْلُ بَيْتِهِ؟ يَا زَيْدُ أَلَيْسَ نِسَاؤُهُ مِنْ أَهْلِ بَيْتِهِ؟ قَالَ نِسَاؤُهُ مِنْ أَهْلِ بَيْتِهِ، وَلَكِنْ أَهْلُ بَيْتِهِ مَنْ حُرِمَ الصَّدَقَةَ بَعْدَهُ، قَالَ وَمَنْ هُمْ؟ قَالَ هُمْ آلُ عَلِيٍّ وَآلُ عَقِيلٍ، وَآلُ جَعْفَرٍ، وَآلُ عَبَّاسٍ قَالَ كُلُّ هَؤُلَاءِ حُرِمَ الصَّدَقَةَ؟ قَالَ نَعَمْ

يزيد بن حيان التيمي کہتے ہیں میں اور حصين بن سبرة اور عمر بن مسلم ، زيد بن أرقم رضی الله عنہ کے پاس گئے

فقال له حصين ( بن سبرة) ومن أهل بيته يا زيد (بن أرقم) أليس نساؤه من أهل بيته قال ان نساءه من أهل بيته ولكن أهل بيته من حرم الصدقة بعده قال ومن هم قال هم آل على وآل عقيل وآل جعفر وآل عباس قال أكل هؤلاء حرم الصدقة قال نعم

حصين ( بن سبرة) نے زيد (بن أرقم) سے پوچھا کہ اے زید کیا نبی کی ازواج ان اہل بیت میں سے نہیں ہیں ؟ انہوں نے کہا بے شک وہ اہل بیت میں سے ہیں لیکن اہل بیت وہ (بھی) ہیں جن پر صدقه حرام ہے ان کے بعد پوچھا وہ کون ؟ کہا وہ ال علی ال عقیل ال جعفر ال عباس ہیں کہا ان سب پر صدقه حرام ہے ؟ کہا ہاں

اس ميں امہات المومنين کو اہل بيت ہي کہا گيا ہے

ليکن پھر صحيح مسلم ميں روايت 4314 ہے
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَكَّارِ بْنِ الرَّيَّانِ، حَدَّثَنَا حَسَّانُ يَعْنِي ابْنَ إِبْرَاهِيمَ، عَنْ سَعِيدٍ وَهُوَ ابْنُ مَسْرُوقٍ، عَنْ يَزِيدَ بْنِ حَيَّانَ، عَنْ زَيْدِ بْنِ أَرْقَمَ، قَالَ دَخَلْنَا عَلَيْهِ فَقُلْنَا لَهُ لَقَدْ رَأَيْتَ خَيْرًا، لَقَدْ صَاحَبْتَ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَصَلَّيْتَ خَلْفَهُ، وَسَاقَ الْحَدِيثَ بِنَحْوِ حَدِيثِ أَبِي حَيَّانَ، غَيْرَ أَنَّهُ قَالَ أَلَا وَإِنِّي تَارِكٌ فِيكُمْ ثَقَلَيْنِ أَحَدُهُمَا كِتَابُ اللهِ عَزَّ وَجَلَّ، هُوَ حَبْلُ اللهِ، مَنِ اتَّبَعَهُ كَانَ عَلَى الْهُدَى، وَمَنْ تَرَكَهُ كَانَ عَلَى ضَلَالَةٍ وَفِيهِ فَقُلْنَا مَنْ أَهْلُ بَيْتِهِ؟ نِسَاؤُهُ؟ قَالَ لَا، وَايْمُ اللهِ إِنَّ الْمَرْأَةَ تَكُونُ مَعَ الرَّجُلِ الْعَصْرَ مِنَ الدَّهْرِ، ثُمَّ يُطَلِّقُهَا فَتَرْجِعُ إِلَى أَبِيهَا وَقَوْمِهَا أَهْلُ بَيْتِهِ أَصْلُهُ، وَعَصَبَتُهُ الَّذِينَ حُرِمُوا الصَّدَقَةَ بَعْدَهُ
ہم نے زید سے پوچھا کيا نبي کي عورتيں ان کي اہل بيت نہيں ؟ زيد نے کہا نہيں اللہ کي قسم کيوں ہوں گي ؟ عورت تو مرد کے ساتھ ايک زمانے رہتي ہے پھر وہ طلاق دے کر دوسري شادي کر ليتا ہے اور عورت اپنے باپ کے گھر لوٹ آتي ہے

راقم کہتا ہے کہ يہ روايت موضوع ہے – گھڑنے والے جاہل حسان بن إبراهيم بن عبد الله الكرمانى قاضى كرمان کو يہ معلوم نہيں ہے کہ امہات المومنين کو طلاق دينا نبي پر ممنو ع قرار دے ديا گيا تھا اور صدقات امھات المومنين پر بھي حرام تھا
حسان بن إبراهيم بن عبد الله الكرمانى ، اہل تشيع مجہول ہے

آوزاج نبي کي تعداد محدود کرنے والي آيات ميں اے نبي سے خطاب کيا جا رہا ہے
يَآ اَيُّـهَا النَّبِىُّ اِنَّـآ اَحْلَلْنَا لَكَ اَزْوَاجَكَ اللَّاتِـى اتَيْتَ اُجُوْرَهُنَّ وَمَا مَلَكَتْ يَمِيْنُكَ مِمَّآ اَفَـآءَ اللّـهُ عَلَيْكَ وَبَنَاتِ عَمِّكَ وَبَنَاتِ عَمَّاتِكَ وَبَنَاتِ خَالِكَ وَبَنَاتِ خَالَاتِكَ اللَّاتِىْ هَاجَرْنَ مَعَكَ وَامْرَاَةً مُّؤْمِنَةً اِنْ وَّّهَبَتْ نَفْسَهَا لِلنَّبِيِّ اِنْ اَرَادَ النَّبِىُّ اَنْ يَّسْتَنْكِحَهَا خَالِصَةً لَّكَ مِنْ دُوْنِ الْمُؤْمِنِيْنَ قَدْ عَلِمْنَا مَا فَرَضْنَا عَلَيْـهِـمْ فِـى اَزْوَاجِهِـمْ وَمَا مَلَكَتْ اَيْمَانُـهُـمْ لِكَيْلَا يَكُـوْنَ عَلَيْكَ حَرَجٌ وَكَانَ اللّـهُ غَفُوْرًا رَّحِيْمًا (50)
اے نبي ہم نے آپ کے ليے آپ کي بيوياں حلال کر ديں جن کے آپ مہر ادا کر چکے ہيں اور وہ عورتيں جو آپ کي مملوکہ ہيں جو اللہ نے آپ کو غنيمت ميں دلوا دي ہيں اور آپ کے چچا کي بيٹياں اور آپ کي پھوپھيوں کي بيٹياں اور آپ کے ماموں کي بيٹياں اور آپ کے خالاؤں کي بيٹياں جنہوں نے آپ کے ساتھ ہجرت کي، اور اس مسلمان عورت کو بھي جو بلا عوض اپنے کو پيغمبر کو دے دے بشرطيکہ پيغمبر اس کو نکاح ميں لانا چاہے، يہ خالص آپ کے ليے ہے نہ کہ اور مسلمانوں کے ليے، ہميں معلوم ہے جو کچھ ہم نے مسلمانوں پر ان کي بيويوں اور لونڈيوں کے بارے ميں مقرر کيا ہے تاکہ آپ پر کوئي دقت نہ رہے، اور اللہ معاف کرنے والا مہربان ہے

تُرْجِىْ مَنْ تَشَآءُ مِنْهُنَّ وَتُؤْوِى اِلَيْكَ مَنْ تَشَآءُ وَمَنِ ابْتَغَيْتَ مِمَّنْ عَزَلْتَ فَلَا جُنَاحَ عَلَيْكَ ذلِكَ اَدْنى اَنْ تَقَرَّ اَعْيُنُهُنَّ وَلَا يَحْزَنَّ وَيَرْضَيْنَ بِمَآ اتَيْتَهُنَّ كُلُّهُنَّ وَاللّـهُ يَعْلَمُ مَا فِىْ قُلُوْبِكُمْ وَكَانَ اللّـهُ عَلِيْمًا حَلِيْمًا (51)
آپ ان ميں سے جسے چاہيں چھوڑ ديں اور جسے چاہيں اپنے پاس جگہ ديں، اور ان ميں سے جسے آپ (پھر بلانا) چاہيں جنہيں آپ نے عليحدہ کر ديا تھا تو آپ پر کوئي گناہ نہيں، يہ اس سے زيادہ قريب ہے کہ ان کي آنکھيں ٹھنڈي ہوں اور غمزدہ نہ ہوں اور ان سب کو جو آپ ديں اس پر راضي ہوں، اور جو کچھ تمہارے دلوں ميں ہے اللہ جانتا ہے، اور اللہ جاننے والا بردبار ہے
لَّا يَحِلُّ لَكَ النِّسَآءُ مِنْ بَعْدُ وَلَآ اَنْ تَبَدَّلَ بِهِنَّ مِنْ اَزْوَاجٍ وَّلَوْ اَعْجَبَكَ حُسْنُهُنَّ اِلَّا مَا مَلَكَتْ يَمِيْنُكَ وَكَانَ اللّـهُ عَلى كُلِّ شَىْءٍ رَّقِيْبًا (52)
اس کے بعد آپ کے ليے عورتيں حلال نہيں اور نہ يہ کہ آپ ان سے اور عورتيں تبديل کريں اگرچہ آپ کو ان کا حسن پسند آئے مگر جو آپ کي مملوکہ ہوں، اور اللہ ہر ايک چيز پر نگران ہے

يه سورہ احزاب ميں ہے
سورہ احزاب کي قيد وفات النبي صلي اللہ عليہ وسلم تک رہي کہ وہ مزيد ازواج نہيں لے سکتے

سورہ تحريم ميں تنبيہ کے لئے اللہ تعالي نے امہات المومنين کو خبردار کيا کہ يہ قيد اٹھائي جا سکتي ہے
اس ميں ہے کہ تعداد ازواج والي قيد ختم کي جا سکتي ہے يہ نہيں ہے کہ کر دي گئي ہے

تمام کلام عسي يعني اگر ہے سے تبنيہ کے انداز ميں شروع ہو رہا ہے

عَسى رَبُّه اِنْ طَلَّقَكُنَّ اَنْ يُّبْدِلَـه اَزْوَاجًا خَيْـرًا مِّنْكُنَّ
اگر نبي تميں طلاق دے دے تو بہت جلد اس کا رب اس کے بدلے ميں تم سے اچھي بيوياں دے دے گا

يعني تعداد ازواج والا حکم اللہ ختم کر سکتا ہےليکن ہم کو معلوم ہے ايسا نہيں کيا گيا

جنگ جمل سے پہلے حسن رضي اللہ عنہ نے بصرہ ميں خطبہ ديا اور اس ميں اسي وجہ سے فرمايا کہ
إِنَّهَا زَوْجَةُ نَبِيِّكُمْ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الدُّنْيَا وَالآخِرَةِ
اے لوگوں عائشہ بصرہ کي طرف آ رہي ہيں جان لو وہ دنيا و آخرت ميں نبي صلي اللہ عليہ وسلم کي بيوي ہيں ليکن اللہ نے تم کو آزمائش ميں ڈال ديا ہے

بات صرف یہ ہے کہ اہل بیت النبی میں بنو عبد المطلب یہ چاہتے تھے کہ ان کو خمس میں سے مال وقت پر ملتا رہے اور ان کے بارے میں احکام کو بیان کیا جائے مثلا ذوی القربی کی آیت قرآن سورہ الشوری میں ہے

قُلْ لَّآ اَسْاَلُكُمْ عَلَيْهِ اَجْرًا اِلَّا الْمَوَدَّةَ فِى الْقُرْبٰى ۗ وَمَنْ يَّقْتَـرِفْ حَسَنَةً نَّزِدْ لَـهٝ فِيْـهَا حُسْنًا ۚ اِنَّ اللّـٰهَ غَفُوْرٌ شَكُـوْرٌ
کہہ دو میں تم سے اس پر کوئی اجرت نہیں مانگتا بجز رشتہ داری کی محبت کے، اور جو نیکی کمائے گا تو ہم اس میں اس کے لیے بھلائی زیادہ کر دیں گے، بے شک اللہ بخشنے والا قدر دان ہے۔

صحیح مسلم میں ہے خوارج کے سردار نَجْدَةُ بن عامر نے ابن عباس سے سوال کیا تو انہوں نے جواب دیا

إِنَّكَ سَأَلْتَ عَنْ سَهْمِ ذِي الْقُرْبَى الَّذِي ذَكَرَ اللهُ مَنْ هُمْ؟ وَإِنَّا كُنَّا نَرَى أَنَّ قَرَابَةَ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ هُمْ نَحْنُ، فَأَبَى ذَلِكَ عَلَيْنَا قَوْمُنَا

تم نے سوال کیا ہے کہ ذی القربی پر کہ اللہ نے اس میں جن کا ذکر کیا وہ کون ہیں ؟ ہم (بنو عبد المطلب ) دیکھتے ہیں کہ یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے رشتہ دار ہیں یعنی یہ ہم ہیں ، لیکن ہماری قوم نے اس پر ہمارا انکار کیا

بنو عبد المطلب نے صبر سے کام لیا اور اس تفسیری اختلاف پر باقی اصحاب رسول سے الگ فرقہ قائم نہیں کیا، لیکن ان کے شیعہ و آزاد کردہ غلام اس چیز پر رائی کا پربت بنا کر فرقہ در فرقہ ہوتے گئے

Leave a Reply

Your email address will not be published.

ten + nine =