امیر المومنین عمر رضی اللہ عنہ

مکمل کتاب لٹریچر/ کتب ابو شہریار میں ملاحظہ کریں

فہرست

اگر میرے بعد کوئی نبی ہوتا تو عمر ہوتے ؟ 5
عمر محدث ہیں یا نہیں ہیں ؟ 8
اہل سنت کا قول : عمر محدث ہیں 11
عمر محدث تھے کی مثالیں 17
ازواج النبی کو حجاب کا حکم 22
مقام ابراہیم کو مصلی کرو 24
فتبارک اللہ احسن الخالقین 28
جنگ بدر کے قیدی 29
شراب کی حرمت 33
عمر رضی الله عنہ کی شہادت کی پیشگی خبر 35
اہل تشیع کا قول : ائمہ محدث ہیں 37
اے ساریہ پہاڑ کی طرف جا 43
محدثین متاخرین کی رائے 44
صوفیاء کی رائے 45
ابن تیمیہ کی رائے 45
ابن قیم کی رائے 46
البانی کی رائے 47
ڈاکٹر عثمانی کی رائے 48
زبیر علی زئی کی رائے 50
وہابیوں کی رائے 51
دائمی کمیٹی کا فتوی 52
وہابی عالم صالح المنجد 54
اہل حدیث کی جدید رائے 54
اذان کی شروعات کا قصہ 57
عمر کی دہشت 65
عمر نے علی کا گھر جلا ڈالا ؟ 68
ابو بکر کے فیصلوں پر عمر کا اشکال 76
باغ فدک کے حق تولیت کا جھگڑا 81
عمر کا بطور خلیفہ تقرر 90
روایات میں احتیاط 92
عمرسے منسوب غیر ضروری کلام 95
عمر قانون کو اپنے ہاتھ میں لیتے تھے 97
عمر نے اپنے بیٹے پر حد جاری کی ؟ 103
ایسا حکم کرنا جو اللہ کا نازل کردہ نہ ہو ؟ 113
تین طلاق کو ایک کر دینا 113
اہل کتاب کی عورتوں سے نکاح کی ممانعت 121
قرآن میں شبھات ہیں ؟ 126
اجتہاد سے فیصلہ کرنا 128
خلفاء کے تقرر پر پالیسی 129
شہادت عمر 134
عمر نے کہا ابن عمر کو خلیفہ مت کرنا ؟ 138

——-

عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ خلیفہ ثانی ہیں اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے خاص صحابی و دوست ہیں – ان کی شان اسلام میں ابو بکر رضی اللہ عنہ کے بعد سب سے بڑھ کر ہے – قرن اول کے اختتام اور قرن دوم کے آغاز میں بعض راوی ایسے تھے جو عمر کے حوالے سے غلو پر مبنی روایات بیان کر رہے تھے یعنی یہ روایات بیان کرنے والے امام مالک و امام ابو حنیفہ کے ہم عصر راوی تھے – – محدثین ان کو فضائل کے تحت لکھ رہے تھے اور قرن سوم تک جا کر ان میں سے چند روایات کو صحیح کا درجہ دیا جا چکا تھا – بعض روایات کا مقصد عمر رضی اللہ عنہ کو بہت بہادر ثابت کرنا تھا مثلا عمر نے علی رضی اللہ عنہ کا گھر جلا دیا تھا – بعض بیان کر رہے تھے کہ عمر رضی اللہ عنہ کی مرضی کے مطابق الوحی آتی تھی جن کو موافقات عمر کا نام دیا گیا ہے البتہ تاریخ نزول قرآن اور متن قرآن سے تقابل کرنے پر ان روایات کی نکارت واضح ہو جاتی ہے – بعض بیان کر رہے تھے عمر کو کشف بھی ہوتا تھا – بعض بیان کر رہے تھے کہ عمر حدود اللہ قائم کرنے میں اتنے اچھے تھے کہ بیٹوں پر بھی حد جاری کی – یہ تمام روایات بحث سے خالی نہیں ہیں – ہوش مندوں کے لئے یہ روایات قابل غور ہیں کہ سمجھیں کہ عمر کے حوالے سے کیا کہا جا رہا ہے نہ کہ خطیبوں کی سنی سنائی آگے کرنے لگ جائیں – یہ سب اس ویب سائٹ پر پہلے سے موجود ہے جس کو تھوڑے اضافہ کے بعد جمع کیا گیا ہے –
ابو شہر یار
٢٠٢٠

Leave a Reply

Your email address will not be published.

two × four =